اسلام آباد:  ڈاکٹر امیر محمد خان جوگزئی نے کہا ہے کہ انھوں نے  گورنر بلوچستان کا عہدہ قبول کرنے سے معذرت نہیں کی، میرے بیان کو غلط انداز میں پیش کیا گیا۔

ڈاکٹر امیر محمد خان جوگزئی نے اپنے ویڈیو پیغام کی وضاحت کرتے ہوئے کہا ہے کہ عہدہ قبول کرنے سے معذرت نہیں کی، ویڈیو پیغام کو غلط انداز میں پیش کیا گیا، میں نے کہا تھا کلیئرنس ملنے تک عہدے کا حلف نہیں اٹھاوں گا۔

ڈاکٹر امیر محمد خان جوگزئی نے کہا کہ میں وزیراعظم اور بلوچستان عوامی پارٹی کا اپنے اوپر اعتماد کیلیے شکر گزار ہوں، میں ایک بڑا سیاسی پس منظر رکھنے والا شخص ہوں جس کے بھائی بھتیجے سب گورنر اور وزرا رہ چکے ہیں، میں نہیں چاہتا کہ میری وجہ سے کسی کے اوپر کوئی حرف آئے، عمران خان کا احترام میرے لیے ہر چیز سے بالاتر ہے، اس لئے میں یہ عہدہ قبول کرنے سے معذرت کرتا ہوں۔

 

نامزد گورنر بلوچستان نے کہا کہ میرے اوپر کسی قسم کا کوئی کیس، کوئی ایف آئی آر نہیں ہے، جس کیس کی بات ہورہی ہے وہ 2005 کا ہے اور ڈبلیو ڈبلیو بی اور ڈبلیو ڈبلیو ایف کا ہے۔

واضح رہے وزیراعظم عمران خان نے ڈاکٹر امیر محمد خان جوگزئی کو گورنر بلوچستان نامزدکردیا تھا تاہم نیب میں جاری انکوائری کے باعث ان کی نامزدگی پر سوال اٹھنا شروع ہوگئے، نامزد گورنر بلوچستان ڈاکٹر امیر جوگزئی کیخلاف نیب کی تحقیقات جاری ہیں، ان پر کڈنی سینٹر کوئٹہ کیلئے زائد قیمت پر مشینری خریدنے کا الزام ہے جب کہ ان کیخلاف 2015 میں کیس دائر ہوا، نیب ذرائع کا کہنا ہے کہ ڈاکٹر امیر محمد جوگیزئی کے خلاف ایک یا دو ماہ میں ریفرنس دائر کر دیا جائے گا۔