لاہور:
پاکستان میں مذہب کے نام پرانتہاپسندی، دھرنے اور توڑ پھوڑ کرنے والے مذہبی گروپوں اور جماعتوں کو چند ماہ میں کالعدم قرار دیے جانے کا امکان ہے۔

حساس اداروں نے جماعتوں کے ذرائع آمدن، قائدین کے بیانات اور درج مقدمات کی تفصیلات اکٹھی کرنی شروع کر دیں۔ پہلے مرحلے میں اہم شخصیات کو قتل اور بغاوت کے فتوے دینے والے قائدین اور جماعتوں کے نام واچ لسٹ میں ڈالے جائیں گے، روش برقرار رہی تو جماعتیں کالعدم اور قائدین نظربند کیے جا سکتے ہیں۔

حساس اداروں کی رپورٹس کے مطابق یہ جماعتیں ملک میں شدت پسندی کوفروغ دینے کے ساتھ ساتھ ملک میں انتشار کو ہوا دینے کا سبب بن رہی ہیں، اگر انکی سرگرمیاں نہ روکی گئیںتو مستقبل میں مزید انتشار کا سبب بن سکتے ہیں، حساس اداروں نے ان جماعتوں اور انکی قیادت کے بنک اکاؤنٹس، ذرائع آمدن، اثاثہ جات کی تفصیلات جمع کرنا شروع کردی ہیں۔