270

اپٹما کا ٹیکسٹائل ویلیو چین کو پیداواری سرگرمیوں کی بحالی کی اجازت دینے کا مطالبہ

کراچی: آل پاکستان ٹیکسٹائل ملز ایسوسی ایشن (اپٹما) نے حکومت سندھ سے بلا تاخیر پوری ٹیکسٹائل ویلیو چین کو اپنی پیداواری سرگرمیوں کی بحالی کی اجازت دینے کا مطالبہ کردیا ہے۔

اپٹما سندھ بلوچستان زون کے چئیرمین زاہد مظہر نے حکومت پر واضح کیا ہے کہ صنعتوں کو کام کرنے کے اجازت ناموں کے عدم اجراء سےصوبے کی بیمار ٹیکسٹائل کی صنعت زندہ نہیں رہ سکے گی اور مکمل بندش اور بڑے پیمانے پر بے روزگاری کا باعث بنے گی۔ انہوں نے کہا کہ یہ انتہائی اطمینان کی بات ہے کہ صوبائی اور وفاقی حکومتوں کے بروقت اقدامات کے سبب کوویڈ 19 کی صورتحال صوبہ سندھ بالخصوص اور پورے پاکستان میں بہتر کنٹرول میں ہے۔ انہوں نے کہا کہ صوبے میں ٹیکسٹائل کی صنعت کو دوبارہ آپریشن کی اجازت دی گئی تھی تو انڈسٹری نے پہلے ہی وائرس کے پھیلاؤ کی روک تھام کے لئے ایس او پیز میں تجویز کردہ تمام احتیاطی تدابیر اختیار کرلی ہیں۔

زاہد مظہر نے کہا کہ اگرچہ حکومت سندھ نے ان ٹیکسٹائل انڈسٹریز کو اجازت دی ہے جن کے پاس برآمدی سامان کی فراہمی کے مکمل وعدوں کے برآمدی ارڈرز ہیں اور ان فیکٹری کے احاطے میں رہائشی کالونیوں والی صنعتوں کو معیاری آپریٹنگ طریقہ کار (ایس او پیز پر عمل کرنے کی سخت ہدایت کے ساتھ) حکومت کی طرف سے دی گئی ہدایات کے مطابق عمل کوریا ہے لیکن اس وقت تک اس صوبے کی معیشت پر کوئی مثبت اثر نہیں پڑے گا جب تک کہ ڈاون اسٹریم ٹیکسٹائل انڈسٹری یا پوری ٹیکسٹائل ویلیو چین کو دوبارہ شروع نہیں کیا جاتا۔انہوں نے کہا کہ ٹیکسٹائل کی صنعت کو دوبارہ کام کرنے کی اجازت نہ دینے کے نتیجے میں صوبے میں سخت معاشی سست روی کا سامنا ہے۔ اس کا نتیجہ بالآخر صوبے کے محصولات میں کمی اور بڑے پیمانے پر بے روزگاری کا باعث بنے گا جس سے امن و امان کی صورتحال بھی پیدا ہوسکتی ہے۔
انہوں نے وزیراعلیٰ سندھ سید مراد علی شاہ اور حکومت سندھ کو یاد دلایا کہ شہر کراچی جو ملک کی مجموعی برآمدات کا تقریباً 52 فیصد بناتا ہے اسے اس صورتحال میں بھاری نقصان ہورہا ہے اور اگر لاک ڈاؤن کی مدت میں اضافہ ہوا تو انڈسٹری کے لیے بڑے پیمانے پر مالی نقصان اور دیوالیہ ہونے کا خدشہ ہے، اس خطرناک صورتحال سے کراچی شہر اور صوبہ سندھ کو بچانے کے لئے ہمیں اسمارٹ لاک ڈاؤن پالیسی اپنانا ہوگی کیونکہ حالات معمول کی طرف آرہے ہیں۔ یورپ، جو پاکستان کے ٹیکسٹائل مصنوعات کا ایک بڑا خریدار ہے آہستہ آہستہ لاک ڈاؤن کو نرم کرتا جارہا ہے اور اس صنعت کو نئے احکامات مل رہے ہیں اور ساتھ ہی پچھلے احکامات کی بحالی بھی کی جارہی ہے جو عالمی عدالت نے کورونا وائرس پر قابو پانے کے لئے لاک ڈاؤن نافذ کرنے کے بعد عارضی طور پر معطل کردیئے گئے ہیں۔

انہوں نے حکومت سندھ سے مطالبہ کیا کہ متعلقہ حلقوں کو ہدایت جاری کریں کہ وہ ٹیکسٹائل کی صنعت اور اس سے وابستہ مکمل سپلائی چین کو دوبارہ پیداواری سرگرمیاں شروع کرنے کی اجازت دیں تاکہ ملک کے سب سے بڑے برآمدی شعبے کو بچایا جا سکے اور بڑے پیمانے پر بے روزگاری پیدا ہونے کے خدشات سے بچنے کے لیے ٹیکسٹائل کی پوری انڈسٹری جکد دوبارہ اپنا کام دوبارہ شروع کرسکے جو وقت کی ضرورت ہے۔ آئیے جانوں کے ساتھ ساتھ معاش کو بھی بچائیں۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں