487

پی آئی اے کے طیارے کا مختلف ممالک میں بغیر کمیونکیشن پرواز کا انکشاف، تحقیقات شروع

کراچی : لندن سے اسلام آباد کے لئے پی آئی اے کی پرواز کے ریڈیو کمیونیکشن میں فنی خرابی کے باعث مختلف ممالک میں بغیر کمیونکیشن پرواز کے انکشاف کے معاملے پر تحقیقات کا آغاز کر دیا گیا ہے۔

تفصیلات کے مطابق لندن سے اسلام آباد کے لئے پی آئی اے کی پرواز کا مختلف ممالک میں بغیر کمیونکیشن پرواز کا انکشاف ہوا ، جس کے بعد سول ایوی ایشن اتھارٹی کے سیفی اینڈ انویسٹی گیشن بورڈ نے تحقیقات کا آغاز کر دیا ہے۔

پرواز کے کپتان نے سول ایوی ایشن اتھارٹی کے متعلقہ شعبے کو ڈی بریف کیا ، طیارے کے کپتان اور فرسٹ آفیسر کے بیانات قلمبند کئے گئے۔

ذرائع کا کہنا تھا کہ رجسٹریشن نمبر APBMG کے حامل بوئنگ 200 -777 طیارے کےساتھ یہ مبینہ واقعہ 27 فروری کو دوران پرواز پیش آیا ، لندن سے اسلام آباد کی پرواز نمبر 786 کا یہ طیارہ یورپ کے دو ممالک سے کمیونیکیشن کے بغیر گزرا، بغیر کمیونیکشن پرواز کے بارے میں ایوی ایشن ہیرالڈ نامی آن لائن میگزین نے رپورٹ کیا۔

یہ بھی پڑھیں:رانا ثنا اللہ نے نیب کے نوٹسز کو ہائی کورٹ میں چیلنج کر دیا

جریدہ کا کہنا تھا کہ ہنگری اور سلواکیا کی فضائی حدود سے پرواز کے بغیر کمیونیکیشن گزرنے پر فوجی طیاروں نے طیارے کو اسکارٹ بھی کیا۔

ذرائع کے مطابق دوران پرواز طیارہ کےریڈیو کمیونیکیشن میں خرابی پیدا ہوگئی تھی، پی کے 786ہنگری ایئرٹریفک کنٹرولرکیساتھ اچانک رابطہ منقطع ہواتھا اور ایئرٹریفک کنٹرولر نے کپتان سے پو چھا کہ کیا آپ مجھے سن سکتے ہو۔

کیپٹن سلمان صدر پالپا نے کہا کہ معامہ آفیشل ابھی تک ہمیں رپورٹ نہیں ہوا، رپورٹ ہونے پر معاملے کو دیکھیں گے، آج کاک پٹ کریو کا بیان ریکارڈ کیا جائے گا، ڈائریکٹر فلائٹ آپریشن سرکاری طور پر آگاہ کریں گے۔

ترجمان پی آئی اے کے مطابق پی آئی اے نے ازخود ایس آئی بی کو معاملے کی شفاف تحقیقات کے لئے درخواست کی ہے، پرواز کو لڑاکا طیارے کے حفاظتی حصار میں لینے کی خبر میں صداقت نہیں۔

ترجمان کا کہنا تھا کہ ہنگری ائیرٹریفک کنٹرولر نے فضائی ٹریفک کے پیش نظر ڈائریکٹ روٹ دیا تھا جس کی تصدیق رومانیہ اور چیک حکام نے طیارہ سے کی، پی آئی اے کو کسی طرف سے کوئی رپورٹ نہیں موصول ہوئی تاہم اب ایس آئی بی بھی مذکورہ ممالک سے رپورٹ طلب کرے گی۔

پی آئی اے ترجمان نے مزید کہا کہ پائلٹ کی رپوٹ نے بھی کسی غیرمعمولی واقع کی نشاندہی نہیں کی تھی، طیارے نے معمول کی پرواز بھری تھی اور اپنے مذکورہ راستے سے متوقع وقت پر اسلام آباد اتر گیا، عاملہ ایک غیر ملکی بلاگ کی رپورٹ کی وجہ سے سامنے آیا تھا۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں